ادب

اندھیرے سے روشنی کی طرف

قسط :3

 اریشہ تقدیس

ناندیڑ

         انسان   کے   مشاغل   و   مصروفيتں  الگ  الگ  ہوتی  ہیں ۔ہر  ایک   اپنے   کچھ  اثرات  لیۓ  ہوۓ   ہوتے  ہیں ۔  یہی مصروفیتں   اور   مشاغل  انسان  کی   پہچان  اور   اسکی   علامت  ہوتی ہے۔  آدمی ہنستا  ہے ,    کبھی روتا  ہے  کبھی  خوش  ہوتا  ہے  کبھی  مایوس  یہ   تمام    حالتیں   اور  کیفیتیں  انسان    کی  زندگی    کو   سنوارتی  ہیں   لیکن   اگر   یہ   تمام   چیزیں   کسی   خاص   مقصد   اور  بغیر   شوق    و   چاہت  کے  ہوں  تو انکے   کوٸی    معنی   نہيں ۔
          وہ     ابھی  بھی   دنیا جہاں   سے  بے  خبر  ایک   نئی  دنیا   کی  سیر کررہی   تھی کہ
اچانک
اسے   کھٹ   کھٹ   کی  آواز  سناٸی  دی۔
وہ  نظرانداز    کرتی  مذید  غور   سے   پڑھنے   لگی ۔
        ماہین  شرمیلی  سی   مسکان  سجاۓ  پھوپھو  کے   سامنے  نظریں    جھکا  کر  بیٹھی   تھی ۔  کہیں   سے  کھٹ  کھٹ  کی  آواز   برابر    آرہی   تھی ۔  وہ   مذید   غور سے  پڑھنے   لگی ۔ وہ   ساتھ   ساتھ  دل  ہی   دل  میں   خود  کلامی  بھی   کررہی  تھی ۔
       ” پھو پھو   کو تو   ماہین  کا  رشتہ   بالکل   بھی   پسند   نہيں تھا۔ اب   خود   ہی  رشتہ   لیکر  آگٸ یہ   پھو پھو بھی  نا ضرور   کچھ   گڑبڑ  کرنے  والی   ہے ”     تجسّس  کے  مارے   اسکا   دل   دھک   دھک   کررہا    تھا  ۔
      ”  زناٸیرہ  زناٸیرہ  اس   لگا   جیسے  کوٸی   اسے   بہت    دور    سے   آواز   دے  رہا   ہو ۔ لیکن   اسکا   دھیان   سارا   ناول   میں   تھا ۔
          پھو پھو اب  چہرے  پہ   مشکوک    سی   مسکراہٹ   سجاۓ   پرس   میں  سے   کچھ  کھنگال   رہی  تھی ۔
         ” زناٸیرہ  ”  اب  کہ   آواز   اتنے   قریب   سے   آٸی   کہ   ہڑبڑاہٹ    میں   ناول  اس کے  ہاتھ   سے چھوٹ گیا ۔ عاٸشہ   بیگم  اس   کے  سر  پر  کھڑی   تھی ۔  برانڈڈ   شلوار   قمیص  پر   دوپٹاّ   گلے   میں   لٹکاۓ ,  بالوں   کی   ڈھیلی  چوٹی  بناۓ  ,  اپنے   صاف   رنگ   چہرے   پر   تھری   پیس   چشّمہ   پہنے , اور   بڑے   بڑے   سیاہ   آنکھوں   میں   ڈھیروں    غصّہ   ضبط   کیۓ ‘ دونوں   ہاتھ   کمر   پر   رکھے   اپنی تیز   نگاہوں   سے   وہ   اسے    گھور   رہی   تھی ۔
        ” ہزار   دفعہ   کہا ہے کہ   یہ   بے  کار  کتابیں  مت  پڑھا کرو ۔ آخری  سال  رہ گیا  ہے  بی۔اے کا ۔ اب  نہيں  پڑھوگی  تو  کب   پڑھوگی  آخر ۔ "
    ” ہاں بس  پھو پھو کے   جانے  کے  بعد پڑھنے  ہی والی تھی ۔”   یہ   فقرہ   اچانک   اسکے   لبوں  سے  نکلا ۔ عاٸشہ   بیگم  نے  حیرانی سے اسے دیکھا ۔ جیسے سمجھ  نہيں  آرہا ہو کہ  وہ کیا  کہہ رہی  ہے ۔
   میرا   مطلب  ممیّ   بس پڑھنے   ہی  والی  تھی اور آپ  اوپر ۔ آپ   کو   کچھ   کام  تھا   مجھ  سے ۔ اس  نے  بات   بدلی ۔
     ”  ہاں !! اب   جب   تم جیسی   نکمیّ   اولاد  گھر   کا  کونا  پکڑ   کر بیٹھ   جاتی   ہے  تو ہم   ماٶں   کو   ہی   تمہاری   کارکردگی   دیکھنے   کیلیۓ    چوبیس  گھنٹے    تمہارا   طواف   کرنا  پڑتا   ہے  ۔ اب   جلدی   سے   یہ    کتابیں    رکھو   اور   پھو پھو   کی   مدد   کرو کچن   میں ۔ ”    مشرقی   ماٶں   کی   طرح   عاٸشہ   بیگم  بھی  ہر  وقت   اپنی  اولاد   کو   مشکوک   نگاہوں    سے   دیکھتی   تھی ۔ جیسے   ہی  یہاں    ان   سے   کوٸی   غلطی   سرزرد   ہوٸی  اور  وہاں   وہ   ان    کے   سر  پر  جاکر  کھڑی   ہوگئیں ۔ ناول   تو   پہلے   ہی   بند  ہوگیا   تھا ۔ اب   مذید   الجھنے   کا   کوٸی   فاٸدہ   نہيں  تھا ۔ ورنہ   ممیّ   کی   ایک   ناختم    ہونے   والی   بحث   شروع   ہوجاتی ۔ اس   نے   من   ہی  من   سوچا   اور   کتاب  ساٸیڈ   ٹیبل پر   رکھ   کر   دروازے   کی   طرف   بڑھ گٸ ۔
                  *****
دو  ہفتے   بعد وہ   اپنے   کمرے   میں   بیٹھی   کمپیوٹر    پر   کوٸی    میل    چیک   کررہی   تھی ۔   اسنے   آج   بالوں   کو  ڈھیلے   جوڑے   میں  باندھ   رکھا   تھا ۔   چوڑی   دار  پر     ہلکا   گلابی   رنگ  کا   فراک   جو   اسکی   گلابی   رنگت   میں   مذید    اضافہ   کررہا  تھا ۔
باہر   سہ پہر  کی  ٹھنڈی   چھایا  ہر   سو  چھاٸی   ہوٸی  تھی ۔   اس  کے  کمرے  کی   بالکنی  جہاں   سے   نیچے   گارڈن   کا  منظر   صاف   دکھاٸی   دیتا   تھا ۔ آج   پتا  نہيں   وہاں   پر   کوّا   صبح   سے   ہی کائیں کائیں   کررہا  تھا ۔
           ” یہ   منحوس   کوّا     آج   کسی   مہمان   کو   ضرور   گھسیٹ   لاۓ  گا ۔ ”   وہ   اب   اس   کوّے    کی    آواز    سے     اِریٖٹیٹ   ہورہی   تھی ۔
         وہ   دوپہر    کا   وقت   تھا ۔  یہ   وقت   احمد  وِلا   کی   خواتین  کے  آرام   کا   وقت  تھا ۔   سارے   مرد   آفس   میں  رہتے  تھے ۔ اور  ناٸمہ   چچی  کا   چھوٹا   بیٹا    رشدان    اسکول  میں۔۔۔۔۔اسلیۓ   ساری   خواتین    اس   وقت  آرام   کیا   کرتی   تھیں ۔ اسے   آج  کالج   سے   چھٹّی  ملی   تھی ۔ اسلیۓ   وہ    گھر   پر ہی  تھی ۔
          ابھی   وہ  اپنے   کمر ے  میں   کمپیوٹر  پر   کوٸی   میل   چیک   ہی   کررہی   تھی   کہ    مین  ڈور   پر   ڈور   بیل   بجنے    لگی ۔ بجانے   والا   بھی   ایک   ساتھ   بیل   بجارہا   تھا ۔
        ” پتا  نہيں  کہاں چلے  گۓ  ہیں   سارے   گھر   والے۔  کسی    کو  آواز  نہيں    آرہی  ہے کیا  وہ    بیزارگی   سے    کسی   اور   کے   دروازہ   کھولنے   کا   انتظار   کرنے   لگی ۔
       بجانے   والا   بھی   تھوڑی   دیر   رُک  اب  دوبارہ   دروازہ   پیٹ   رہا تھا ۔   اب   وہ  بادل  نا خواستہ  کمرے   سے  نکلی ۔
     ”  یہ   انسان   آج   دروازہ  توڑ   کر   دم لیگا ”   اس   کی   چھٹّی   حس    نے   کہا  کہ   یہ   انداز   وہ   پہچانتی   ہے  لیکن  دروازہ  پیٹنے   کی   آواز   نے   اس   کی  آواز   کو   دبادیا ۔
وہ   دوپٹہ  سنبھالتی   ہوٸی   سیڑھیاں   اترنے   لگی ۔
        "آرہی  ہوں دو  منٹ  سانس  تو لےلو ۔ ”  اسنے   دروازے   کی  طرف   تقریباً   بھاگتے    ہوۓ   کہا ۔
     اب   دستک   کی   آواز   بند  ہوگٸ  تھی ۔ دروازے  کی   کنڈی   شاید   جام   ہوگٸ   تھی ۔ اسلیۓ   اس   کے   دھکیلنے   پر   بھی   وہ   کھل   نہيں   رہی   تھی ۔
          اب   اسنے   اپنی  قوّت   سے   دروازہ   دھکیلا ۔  دروازہ    جو   لوہے   کا   بنا  تھا ۔  چٹ   کی   آواز   کے   ساتھ   کھلتا   چلاگیا ۔ اور  سیدھا    جاکر   آنے   والے    شخص   کی    پیشانی   سے   ٹکرایا ۔   آنے   والا  شخص   اس    اچانک   حملے   کیلۓ  بالکل   بھی   تیار    نہيں  تھا ۔  دروازہ  اور   آنے   والے شخص  کے   سر   کا   ملن   ہوتے   ہی   اسکے   منہ   سے   سخت   کراہ   نکلی ۔
    ہاۓ   زناٸیرہ   ماردیا  تم نے   درد   سے  کرہا تے  ہوۓ    وہ   بس   اتنا   ہی   کہہ  پایا ۔  اسکی   پیشانی   سے  البتہ   کوٸی  خون   نہيں  نکلا   تھا ۔ لیکن    زناٸیرہ   کے  حملے   کا    ثبوت اس  کی    پیشانی   پر   آنے   والا   تازہ   نیلا    نشان   دے  رہا   تھا ۔  نشان   دیکھ   کر   وہ  کوٸی  معمولی سی   چوٹ   لگتی  تھی ۔ لیکن   اس  شخص   کی کراہٹیں  اور   چہرے   کے   تاثرات   اس حادثے کو سوچا سمجھا جانی حملہ   بنانے   کی   جان توڑ   کوشش   کررہے   تھے ۔
     آنے  والے   شخص   کو  دیکھ  کر  اسے   لگا   کہ   جیسے   اسکی  سانس   تھم     چکی   ہے۔
          ” عالیان  تم
تم   کیوں   آۓ میرا
میرا   مطلب   کب,  آۓ  لندن  سے”   اسے   سمجھ   نہيں    آرہا   تھا   کہ   وہ  اپنے   چچازاد   بھاٸی    اور   شوہر نامدار    کو   دیکھ   کر   کس  طرح   کے   تاثرات   دے ۔   اسے   یوں   اچانک   دیکھ  کر  زناٸیرہ   کے   حلق   تک  کرواہٹ    پھیل   گٸ ۔ یہ   وہ    انسان   تھا   جس   کے   ساتھ    کسی   بھی   عنوان   پر   کی   ہوٸی   بات   چیت   بغیر   جھگڑے    کے    ختم   نہيں  ہوتی    تھی ۔ وہ    آج   بھی   بالکل   ایسا  ہی  لگ رہا   تھا  ۔  جیسا   دیڑھ   سال   پہلے  اسے   لندن   واپس   جاتے  ہوۓ   آخری   بار  لگا تھا ۔  اسنے   آج   بلیٶ   جینس   پر  واٸٹ   اور   آسمانی   شیڈ کی  شرٹ  پہنا  ہوا  تھا ۔  جس  کے  آستین   عادتًا کہنیوں   تک   فولڈ کیے   ہوۓ  تھے ۔  وہی   بالوں   کو  جمانے  کا  اسکا  اسٹاٸلش   سا  انداز وہی   خوبرو   سا  چہرا بس کچھ   الگ   تھا  تو  وہ  نیلا   سا   نشان  جو   اسکے  ماتھے   پر   زناٸیرہ   کی   وجہ  سے   آیا   تھا ۔
           یہ   نشان   دیکھ   کر   اسے   ایک   پل  کیلۓ   لگا   کہ   وہ   وہاں   سے  بھاگ  جاۓ ۔
لیکن۔۔۔۔۔تبھی   اسے   کسی  کی آہٹ   محسوس  ہوٸی ۔ جیسے   کوٸی   اسی    طرف  آرہا   تھا ۔
             ” زناٸیرہ   کون   ہے بیٹا ! دروازے   میں ہی   کھڑا    رکھوگی   یا   اندر   بھی   بلاٶگی ۔۔” یہ  بی   جان  کی   آواز   تھی ۔ شاید  بیل   کی   مسلسل   آواز   کی   وجہ   سے   ان  کی  نیند   کھل   گٸ    تھی ۔ لیکن   اگر  وہ   اپنے   چاند   سے   پوتے   کے   چہرے    پر  یہ  نشان   دیکھا   تو۔۔۔!! یا خدا  پھر   تو   میری   خیر   نہيں
یہ    خیال   جیسے  ہی   زناٸیرہ   کو  آیا  اسنے   اپنے   بادامی   آنکھوں   میں   ڈھیروں    معصومیت   لیۓ   اس  کی  طرف منّت  بھری   نظروں   سے  دیکھا ۔  لیکن یہ   کیا   وہ   شاید   کسی   اور   ہی موڈ  میں   لگ رہا تھا  ۔ بی جان  پر   نظر   پڑتے   ہی   اسکی   آنکھوں   میں   شرارت   سوجھی ۔   وہ   اسکے    ہر   انداز    سے    واقف    تھی ۔  لو   ہوگیا  اب   ڈرامہ  شروع
       ” سرپراٸز   بی  جان۔”   وہ   ایک   فاتح سی   مسکراہٹ    اس پر   ڈال   کر  اندر   آیا ۔
         اُسے   یوں   اچانک   دیکھ   کر   بی  جان   نے   فرط جذبات    میں   اسے اپنے   گلے   سے   لگالیا ۔ وہ   پورے   دیڑھ   سال   بعد   انڈیا   آیا   تھا ۔
            "عالیان   میرا   بچّہ۔۔۔کیسے    ہو  تم  !  ”  اب    بی   جان   اسے   اپنے   سے  الگ  کر    اس  کے   ماتھے   پر  ہاتھ   پھیر   رہی   تھی ۔تبھی جی   ہاں  تبھی اس   کے  منہ   سے     ہلکی  سی  کراہ   نکلی ۔
       اسکے   منہ   سے   یوں  اچانک   کراہ   سن  کر  بی  جان   نے   بے   ساختہ  اسے   اپنے   سامنے   کیا ۔  اور  جب  اسکے   ماتھے  پر  وہ  نیلا   نشان   دیکھا  تو  بی   جان   کو   مانو  کرنٹ  سا   لگ   گیا ۔
"عالیان!!   بیٹا   یہ   نشان   کیسے  آیا  تمہيں ۔ ”  بی  جان   نے   بڑی فکرمندی   سے   اسے   پوچھا ۔  جسے   سن   کر   جہاں  عالیان   کے  چہرے   پر   ڈمپل   پڑھا   وہیں   زناٸیرہ   نے   تکلیف   سے  اپنی   آنکھیں   بند   کرلی ۔
      عالیان   کو  چپ   کھڑے   دیکھ   بی  جان  مذید   گھبراگٸ ۔
   ”  بولو   نا   بیٹا ! بول  کیوں   نہيں رہے   ہو ۔ تکلیف   ہورہی  ہوگی  نا   بہت ۔”
بی  جان   کے  ان  سوالوں   سے   جہاں  وہ      لطف  لے رہا  تھا ۔ وہیں اس   پر  بجلیاں   گررہی   تھی ۔ اتنے   سالوں    بعد   اپنے  پوتے  کو  دیکھ   کر   بی جان  کی    ساری   ممتا جاگ   اٹھی   تھی ۔
           بی جان  نے  اُسے  صوفے   پر   بیٹھایا  اور  خود  بھی  اس   کے   بازو   بیٹھ  گٸیں ۔ اور  وہ
وہ   وہیں  کھڑی   رہی ۔ اس   کے  قدم   اپنی   جگہ   سے   نہيں   ہل رہے  تھے ۔ وہ   ابھی    اس   کے  اس طرح  اچانک   آجانے   والے   سکتے   سے   نکلی   بھی   نہيں تھی   کہ  یہ   سب   کچھ اب  بہت   جلد   اسے  بی جان   کی   عدالت   میں   مجرم   بن کر   کٹہرے  میں   کھڑا   ہونا   تھا ۔ کیونکہ   ڈرامے باز  اپنی   پوری   طرح  سے   لطف  اندوز   ہونے  کے  بعد  اپنا    ڈرامہ  شروع   کرنے  کے لیے  تیار  تھا ۔ اپنے   چہرے   پر  ڈھیروں   معصومیت    لیۓ   اور   بھولی  سی   شکل   بناتا   وہ کہنے  لگا ۔
           ” کیا  بتاٶں   میں  بی جان !  فلاٸٹ   لیٹ  تھی ‘  سفر  میں   بھی   ٹھیک   سے آرام   نہيں    کر پایا ۔ اور  تو   اور   سب  سے   ملنے   کیلۓ   اتنا  بے  چین   تھا  کہ   رات   میں   سو   بھی   سکا ۔۔۔۔” اتنا   کہہ  کر  اس  نے   ایک   نظر   زناٸیرہ    کو   دیکھا ۔
” اور   اب   جب  گھر  پر   آیا   تو   زناٸیرہ   بی بی  نے   لوہے  کا  دروازہ   دے  مارا ۔  پتا   نہيں  کن   خیالوں   میں  تھی ۔”
کسی  بھی  خیالوں  میں  نہيں تھی  میں۔ وہ  اپنی  جگہ   سے  ہٹ   کر  صوفے  کے   پاس  آکر  کھڑی  ہوٸی ۔
” مجھے  کیا  پتا  تھا  بی  جان  کے   یہ   آیا   ہے اتنی   زور   سے    دروازہ   بجا رہا  تھا ۔ میں  ڈر   گٸ  تھی  کہیں  آپ  نا  جاگ  جائیں ۔  اسلیۓ بس   وہ   اس نے   اب   بی  جان  کا  سہارا  لیکر   سامنے  والی   ٹیم  کو  پوری   طرح  سے  شکست   دینےکی   کوشش   کی ۔ بی   جان   دونوں کی  بات   سن   کر  کچھ   کہنے  ہی   والی  تھیں  کہ وہ  پھر   سے  کرہایا ۔ اس  کی  کراہ   سن  کر   وہ  اور   پریشان   ہوگٸ ۔ وہیں  زناٸیرہ   غصّہ    سے   صرف   اسے   گھورتی  رہ   گٸ ۔
      ”  ہاۓ   میرا  بچّہ  ! اتنے   گھنٹوں   کا   سفر    طۓ   کر کر   آیا  ہے ۔ اور   آتے   ہی  یہ   مصیبت ۔ چلو   بیٹا   جاٶ   تم   اپنے   کمرے   میں ۔ ناعمہ  تو  ابھی   سورہی  ہوگی ۔ تم   آرام  کرو  میں  جگادونگی   اسے  تھوڑی  دیر  میں ۔”
” جی  بی جان ۔  جیسے  آپ  کہیں۔ میں  ڈنر  پر   ملتا  ہوں ۔ "
اس  نے  مسکراتے  ہوۓ   ایک  نظر   بی جان   کو  دیکھا اور  دوسری  زناٸیرہ   کو وہ   جو   پہلے   ہی   غصّہ   سے   بھری   ہوٸی    تھی ۔ وہاں   عالیان    کی   مسکراہٹ   نے   اس   کے   تن بدن   میں  آگ  لگادی ۔
         ” اب تو   ہر  دن   جناب  کا نیا ڈرامہ  دیکھنے  کو  ملے گا ۔ ”  وہ   خفگی  کے   عالم  میں  من  ہی   من  بڑبڑ ائی ۔
         ..*****..
عالیان  کے    اس   طرح   اچانک   آجانے   سے   گھر   میں  رونق  سی   لگ  گٸ   تھی ۔ پورا   گھر   کچن   میں  بنے  طرح طرح  کے   پکوانوں   کی   خوشبوں   سے   مہک   رہا تھا ۔ زناٸیرہ   کے  والد  فرقان  صاحب  اور   عالیان  کے  والد  امجد صاحب  بھی   آج  گھر  جلدی  آگۓ  تھے ۔ بی جان  کے  چہرے   کی  خوشی   بھی  کسی  سے  چھپی نہيں تھی ۔ رشدان  کو  بھاٸی   کے  آنے  سے  زیادہ   خوشی  اس   کے  ساتھ  لاۓ  تحفوں  کی  تھی ۔ وہ  تحفوں   کا   بیگ   کھولے   بیٹھا تھا ۔ مہناز  پھوپھو  بھی لاٶنج   میں   بیٹھے   اپنے  بھتیجے  کے ساتھ  باتوں  میں  مصروف تھیں ۔ ایسے   رنگین  ماحول میں  صرف  وہ   ہی   اپنے   کمرے  میں  ہر چیز   سے  خفا  اور   بیزار   سی   بیٹھی تھی ۔  باریک   کامدار  دوپٹّے   کو   اس  نے   وہی  صبح  والے  گلابی   فراک  پر  بڑے  ہی  اسٹاٸلش  انداز  میں   پہنا تھا ۔ کمرے  میں   کم  روشنی   کا  بلب  جلاۓ ۔ کھڑکی  کے   ساتھ  بنے  صوفے  پر  لیٹے  وہ  یوں  ہی  خالی  خلا  میں   دیکھ  کر  پرانی   یادوں   کو  کھروچ  رہی   تھی ۔
        عالیان  امجد  احمد اس سے   تین   سال  بڑا  اسکا   چچازاد  بھاٸی اور  دیڑھ   سال   پہلے  ہوۓ  نکاح  کے   بعد    اسکا   کاغذی    شوہر  ۔
جسے  اسنے    بطور   شوہر   کبھی  بھی   قبول   نہيں   کیا  تھا ۔
(جاری)
Tags
Show More

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

اسے بھی پڑھیں

Close
Back to top button